37

’شاہد مسعود کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی ہو گی‘

ڈاکٹر شاہد مسعود

تصویر کے کاپی رائٹ
Twitter

Image caption

شاہد مسعود نے دعویٰ کیا تھا کہ عمران علی کے غیر ملکی بینکوں میں 37 اکاؤنٹس ہیں

پاکستان کی سپریم کورٹ نے صوبہ پنجاب کے شہر قصور میں زینب سمیت دیگر کمسن بچیوں کے قاتل عمران علی سے متعلق جھوٹے انکشافات کے معاملے پر ٹی وی اینکر ڈاکٹر شاہد مسعود کا جواب مسترد کرتے ہوئے ان کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کرنے کا عندیہ دیا ہے۔

چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے پیر کو ڈاکٹر شاہد مسعود کے الزامات سے متعلق کیس کی سماعت کی۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق پیر کو معاملے کی سماعت شروع ہوئی تو شاہد مسعود کے وکیل شاہ خاور نے عدالت عظمیٰ کو بتایا کہ ان کے موکل کی جانب سے نیا تحریری جواب جمع کروایا گیا ہے جس میں ندامت کا اظہار کیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

ڈاکٹر شاہد مسعود کا اپنے دعووں پر ندامت کا اظہار

’شاہد مسعود کے معافی مانگنے کا وقت اب گزر چکا ہے‘

زینب قتل کیس: شاہد مسعود کے دعوے جھوٹے ثابت

شاہد مسعود کی ’میں نہ مانوں‘

’35 پنکچر بھی موصُوف نے ایجاد کیے تھے‘

شاہد مسعود کے وکیل عدالت میں یہ بھی کہا کہ اگر یہ توہین عدالت کا کیس ہے تو ان کے موکل معافی مانگ لیتے ہیں جس پر چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ معافی کا وقت گزر گیا، اب قانون کے مطابق کارروائی ہوگی۔

اُنھوں نے کہا کہ اس جواب میں واضح طور پر معافی کا بھی نہیں لکھا گیا اور صرف اتنا کہا گیا ہے کہ اُنھیں دعوے جھوٹے ثابت ہونے پر ندامت ہے۔

چیف جسٹس ثاقب نثار نے مزید ریماکس دیے کہ ‘دیکھنا ہو گا کہ عدالت میں غلط بیانی پر دہشت گردی ایکٹ لگانا ہے یا نہیں’ اور یہ کہ ‘شاہد مسعود پر کس قانون کا اطلاق ہو گا۔’

سماعت کے دوران چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیے کہ اس بات کا جائزہ لیا جائے گا کہ کس حد تک غلطی ہوئی ہے، چینل کتنے دن تک بند ہو سکتا ہے اور شاہد مسعود پر کتنے دن کی پابندی عائد کی جا سکتی ہے، ان تمام حالات کا جائزہ لیں گے۔

عدالت نے فیصل صدیقی کو اس سلسلے میں عدالتی معاون مقرر کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ اس بارے میں بتائیں کہ عدالت اس بارے میں کہاں تک جا سکتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
PFSA

Image caption

شاہد مسعود نے عدالت کو بتایا تھا کہ ملزم عمران کا تعلق ایک بین الاقوامی گروہ سے ہے جو فحش فلمیں بناتا ہے

خیال رہے کہ پاکستان کے وفاقی تحقیقاتی ادارے نے اپنی رپورٹ میں ڈاکٹر شاہد مسعود کی جانب سے قصور میں آٹھ سالہ زینب کو جنسی تشدد کا نشانہ بنا کر قتل کرنے کے مقدمے میں موت کی سزا پانے والے مجرم عمران علی کے بارے میں کیے جانے والے دعوؤں کو جھوٹ پر مبنی قرار دیا تھا۔

یکم مارچ کو سپریم کورٹ میں جمع کروائی گئی اس رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ زینب قتل سے متعلق ڈاکٹر شاہد مسعود اپنے پروگرام میں ملزم عمران علی کے بارے میں جو 18 مبینہ حقائق سامنے لے کر آئے تھے ان میں سے کوئی ایک بھی ثابت نہیں ہوا ہے۔ عدالت نے اس از خو نوٹس کی سماعت ایک ہفتے کے لیے ملتوی کردی گئی ہے۔

دوسری طرف سپریم کورٹ نے حکمراں جماعت کے سابق سینیٹر نہال ہاشمی کے خلاف توہین عدالت کے مقدمے میں فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ملزم پر فرد جرم26 مارچ کو عائد کی جائے گی۔

واضح رہے کہ اس سے پہلے بھی نہال ہاشمی توہین عدالت کے مقدمے میں ایک ماہ کی سزا کاٹ چکے ہیں۔ سزا پوری ہونے کے بعد جیل سے رہائی پر اُنھوں نے ایک مرتبہ پھر اعلی عدلیہ کے ججز کو تنقید کا نشانہ بنایا تھا جس پر سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے اُنھیں اظہار وجوہ کا نوٹس جاری کیا تھا۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply