15

روسی خواتین غیر ملکی مردوں سے سیکس سے اجتناب کریں اور تہران میں خواتین کہاں

روس

تصویر کے کاپی رائٹ
AFP

روس کی معروف رکن پارلیمان کو اس وقت تنقید کا نشانہ بنایا گیا جب انھوں نے روسی خواتین سے التماس کیا کہ وہ روس میں ہونے والے فیفا ورلڈ کپ کے دوران غیر ملکی مردوں کے جنسی روابط سے اجتناب کریں۔

کمیونسٹ جماعت کی رکن پارلیمان تمارا پلینی اووا نے ماسکو ریڈیو سے بات کرتے ہوئے کہا وہ قوم پرست نہیں ہیں لیکن روسی خواتین کو دوسری نسل کے مردوں کے ساتھ سیکس سے اجتناب کرنا چاہیے کیونکہ آخر میں بچے ہی متاثر ہوتے ہیں۔

انھوں نے یہ بات ’اولمپکس کے بچوں‘ کے سوال پر کہی۔ ’اولمپکس کے بچوں‘ کی اصطلاح 1980 میں روس میں ہونے والے اولمپکس کے بعد ایجاد کی گئی تھیں کیونکہ مخلوط النسل بچوں کی پیدائش میں اضافہ ہوا تھا۔

تمارا پلینی اووا نے کہا کہ ان بچوں کو ان کے غیر ملکی باپ چھوڑ کر چلے گئے۔

’اگر باپ بھی اسی نسل کے ہیں تو کوئی حرج نہیں لیکن اگر وہ دوسری نسل کے ہیں تو پھر یہ اچھا نہیں ہے۔‘

انھوں نے مزید کہا ’بچوں کو چھوڑ دیا جاتا ہے اور وہ اپنی ماؤں کے ہمراہ رہتے ہیں۔ ہمیں اپنے بچوں کو جنم دینا چاہیے۔‘

خواتین کہاں ہیں؟

تصویر کے کاپی رائٹ
Tehran

دوسری جانب ایران کے دارالحکومت تہران میں فیفا ورلڈ کپ میں ایرانی ٹیم کی حوصلہ افزائی کرنے کے لیے بہت بڑا بل بورڈ لگایا گیا ہے۔

لیکن اس بل بورڈ پر تنقید اس لیے کی جا رہی ہے کہ اس تصویر میں ایک بھی خاتون نہیں ہیں۔

تصویر میں مختلف لسانیت سے تعلق رکھنے والے مرد ہیں جو فیفا ورلڈ کپ ٹرافی کے گرد جشن منا رہے ہیں۔ اس تصویر کے نیچے لکھا ہے ’متحد ہم چیمپیئن ہیں: ایک قوم، ایک دھڑکن‘۔

اس بل بورڈ کے جواب میں قانون اخبار نے اس بل بورڈ کی تصویر صفحہ اول پر چھاپی ہے اور نیچے لکھا ہے ’خواتین کے بغیر ہم ہاریں گے‘۔

ایرانی صحافی حسین نے کہا کہ ’جشن میں ہمارے ملک کی خواتین کہاں ہیں؟ کیا اس ملک میں خواتین نہیں رہتیں؟‘

تہران میونسپیلیٹی کے اصلاح پسند رکن مصطفیٰ موسوی کا کہنا ہے کہ انھوں نے اس معاملے کو حکام کے ساتھ اٹھایا ہے اور انھوں نے وعدہ کیا ہے کہ یہ بل بورڈ تبدیل کر دیے جائیں گے اور وہ لگائے جائیں گے جن میں خواتین بھی ہوں۔



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply